Night of Destiny and its Virtue | شب قدر اور اس کی فضیلت

Night of Destiny and its Virtue

Night of Destiny and its Virtue | شب قدر اور اس کی فضیلت

Night of Destiny

One of the nights of Ramadan is called Shab-e-Qadr, which is a very auspicious and blessed night. This night has been declared by Allah Almighty as better than a thousand months. Eighty-three years of a thousand months are four months. That is, the person who spent one night in worship spent eighty-three years and four months in worship, and the time of eighty-three years is at least because
خَيْرٌ مِّنْ اَلْفِ شَهْرٍ

It has been pointed out that Allah Almighty will give as much reward as He wills. Estimating this reward is beyond the reach of human beings.

The meaning of Laylat al-Qadr


1. Imam Zuhri (may Allah have mercy on him) says that “Qadr” means status, because this night is higher in terms of honor and status than other nights, so it is called Laylat al-Qadr.

2. It is narrated from Hazrat Abdullah bin Abbas (RA) that since on this night the portfolio of destiny and decision of one year is handed over to the angels by Allah Almighty, it is called Laylatul Qadr.

3. The reason for interpreting this night as Qadr is also stated as follows:

Revealed in it is a book with the power of the tongue, the power of the tongue, the power of the ummah, the value of it and the cause of the Almighty, but the remembrance of the word of power in this Surah three times for this reason

(Tafsir Kabir, 32:28)
On this night, Allah Almighty revealed His valuable book for the valuable Ummah through the Holy Prophet (PBUH). That is why the word Qadr appears three times in this Surah.

4. The word is also used in the sense of scarcity. The reason for calling it valuable in this sense is that the angels descend from the sky to the earth so frequently that night that the earth becomes narrow.

(Tafsir al-Khazan, 4: 395)

5. Explaining the reason for "Qadr", Imam Abu Bakr Al-Waraq says that this night makes the worshiper worthy of Qadr even though he was not worthy of it before.

(Al-Qurtubi, 20: 131)

Why was this night granted?
The most important reason for the bestowal of this night is the compassion of the Holy Prophet (sws) on this Ummah and his grief. It is narrated in Imam Malik (may Allah have mercy on him)

The Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “Build the people before and after the death of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him).

Muwatta Imam Malik, Book of Fasting, Chapter Majaa on Laylat al-Qadr

When the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) was informed about the ages of the previous people, he looked at the age of the people of his ummah less than his and thought that the people of my ummah were younger than him. How can you do the same thing? ”

When Allah Almighty saw your holy heart saddened in this matter

Fatah Laylat al-Qadr is better than a thousand cities

Muwatta Imam Malik, Book of Fasting, Chapter Majaa on Laylat al-Qadr

So he gave the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) Laylat al-Qadr, which is better than a thousand months.

This is also supported by the narration narrated from Ibn Abbas (may Allah be pleased with him) that in the Holy Court of the Holy Prophet (sws) a man from the Children of Israel was mentioned who fought in the way of Allah for a thousand months. Was

The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “O my Lord!

(Tafsir al-Khazan, 4: 397)
The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) was astonished at this and wished for his ummah. When he prayed, “O my Lord, the good deeds of the people of my ummah will be lessened due to their short life.” Allah Almighty blessed Shab-e-Qadr.

Another narration is that once the Holy Prophet (sws) mentioned various personalities like Hazrat Ayub, Hazrat Zakariya, Hazrat Ezekiel, Hazrat Joshua (sws) in front of the Companions Rizwanullah Ajmeen and said that these Hazrats He worshiped Allah Almighty for a year and did not disobey Allah Almighty even in the blink of an eye. The Companions became jealous of these chosen personalities. Imam Qurtubi (may God have mercy on him) writes that at that time Gabriel (peace be upon him) came to the Holy Prophet (peace be upon him) and asked:

O Muhammad! I wonder if you have come down from the worship of the people of Samanin, the year has not come down, but a good thing has come down from it: then I have come down to it on the Night of Destiny, the Messenger of Allah, may Allah bless him and grant him peace.

(Al-Qurtubi, 20: 130)

O Muhammad Mustafa (peace be upon him) the people of your ummah are jealous of the eighty years of worship of these former people, so your Lord has given you better than that and then the recitation of إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةِ الْقَدْرِ O The face of the Holy Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) shone with joy.

Therefore, the Almighty, on behalf of the Holy Prophet (sws), bestowed the grace of Laylat-ul-Qadr on this Ummah and declared its worship to be not 80 but 83 years and more than four months.

Characteristic of the Ummah of Mustafawi (peace be upon him)
Laylat al-Qadr is only a feature of the ummah of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him). Imam Jalal-ud-Din Suyuti (may Allah have mercy on him) narrates from Hazrat Anas (may Allah be pleased with him) that the Prophet (peace and blessings of Allah be upon him) said:

That is why I do not love Laylat al-Qadr

(Deuteronomy, 6: 371)

"Allah Almighty has given this holy night only to my ummah. None of the previous ummahs got this honor."

Who was called Abid in the first nations?
The commentators write that in the first nations the worshiper was the one who worshiped Allah for a thousand months. But in the charity of the Holy Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him), this ummah gained the virtue that it attains a better position than just one night of worship:

It is said that the worshipers do not worship the names of the worshipers, even the worshipers of the city of Fajjal, the Almighty, the Almighty, Muhammad, peace and blessings of God be upon him,

(Fatah al-Qadir, Lalshokani, 5: 472)

The worshiper of the previous ummahs would be the one who used to worship Allah for a thousand months, but in comparison, Allah Almighty bestowed this night of value on the members of this ummah whose worship was considered better than this thousand months. ۔ ''

It is as if this great blessing has also been bestowed on the Ummah by the government of the two worlds in the charity of slavery.

Virtue of the Night of Destiny. ۔ ۔ In the light of hadiths
It is narrated on the authority of Abu Hurayrah that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said:

1. From the people of Laylat al-Qadr, faith and accountability are forgiven

(Sahih Bukhari, 1: 270)

"Whoever worships on the Night of Destiny in the hope of reward, his past sins are forgiven."

In this instruction of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him), where remembrance, worship and obedience are instructed during the hours of Laylat al-Qadr, it is also pointed out that worship should be for the pleasure of Allaah alone, not hypocrisy and malice. He promised that he would not do anything wrong. Therefore, this night becomes a good news of forgiveness for the servant who worships with this glory.

2. It is narrated on the authority of Anas that once upon the arrival of Ramadan, the Holy Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said:

This city is present to you and it is a good night for a city from a sanctuary, it is not a sanctuary of good, or a sanctuary of good, except a sanctuary of good

(Ibn Majah, Sunan: 20)
This is a night which is better than a thousand months in the month that has come to you. The one who is deprived of that night is as if he has been deprived of all good, and the one who is truly deprived of the good of that night can be deprived. Be deprived

There can be no doubt about the deprivation of a person who loses such a great blessing due to negligence. When a person spends so many nights waking up for trivial matters, why not wake up for a few more nights of worship than the worship of the same year?

3. It is narrated on the authority of Anas that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) while describing the virtue of Laylat al-Qadr said:

If Laylat al-Qadr descends from Jibreel (peace be upon him) in the heavens from the angels

On the night of Qadr, Gabriel Amin descends to the earth in a swarm of angels and prays for the forgiveness of the person who is standing (in any case) remembering him.

The same thing is stated in Surah Al-Qadr with the following words:

Reveal the angels and the spirit in it with the permission of their Lord from every command.

(Al-Qadr, 97: 4)

“In this (night) the angels and the trustworthy spirit (Gabriel) descend by the command of their Lord (with goodness and blessings) with every command.”

Why was Laylat al-Qadr kept secret?
Here are some tips to help you get the most out of your night.

1. Other important secrets, such as the Great Name, were kept secret this night, just like the hour of prayer on Friday.

2. If it had not been kept secret, the path of action would have been blocked and the action of that night would have been sufficient. It was not revealed for the sake of continuity in the taste of worship.

3. If a person had that night left due to some compulsion, it would not have been possible to cure this trauma.

4. Since Allah Almighty loves His servants to stay awake and awake at night, He did not appoint a night so that they could spend many nights in worship in search of Him.
5. The reason for non-determination is also compassion for the sinners, because if a sin had been committed that night in spite of knowledge, it would have been written as a crime to injure the greatness of Laylat al-Qadr.

Night of Destiny
It is narrated on the authority of Hazrat Ayesha (may Allah be pleased with her) that I asked the Holy Prophet (peace and blessings of Allah be upon him) what should be the duty of Laylat al-Qadr? The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said:

O Allah, forgive me, love me, forgive me

“Oh! You are the Forgiver and the Forgiver. So forgive me too. "

شب قدر اور اس کی فضیلت

 شب قدر اور اس کی فضیلت

شب قدر


رمضان المبارک کی راتوں میں سے ایک رات شب قدر کہلاتی ہے جو بہت ہی قدر و منزلت اور خیر و برکت کی حامل رات ہے۔ اسی رات کو اللہ تعالیٰ نے ہزار مہینوں سے افضل قرار دیا ہے۔ ہزار مہینے کے تراسی برس چار ماہ بنتے ہیں۔ یعنی جس شخص کی یہ ایک رات عبادت میں گزری اس نے تراسی برس چار ماہ کا زمانہ عبادت میں گزار دیا اور تراسی برس کا زمانہ کم از کم ہے کیونکہ
خَيْرٌ مِّنْ اَلْفِ شَهْرٍ
کہہ کے اس امر کی طرف اشارہ فرمایا گیا ہے کہ اللہ کریم جتنا زائد اجر عطا فرمانا چاہے گا عطا فرما دے گا۔ اس اجر کا اندازہ انسان کے بس سے باہر ہے۔
شب قدر کا معنی و مفہوم
امام زہری رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ ’’قدر‘‘ کے معنی مرتبہ کے ہیں چونکہ یہ رات باقی راتوں کے مقابلے میں شرف و مرتبہ کے لحاظ سے بلند ہے اس لئے اسے لیلۃ القدر کہا جاتا ہے۔

۔ حضرت عبداللہ بن عباس رضی اﷲ عنہما سے مروی ہے کہ چونکہ اس رات میں اللہ تعالیٰ کی طرف سے ایک سال کی تقدیر و فیصلے کا قلمدان فرشتوں کو سونپا جاتا ہے اس وجہ سے یہ لیلۃ القدر کہلاتی ہے۔
اس رات کو قدر کے نام سے تعبیر کرنے کی وجہ یہ بھی بیان کی جاتی ہے
نزل فيها کتاب ذو قدرٍ علی لسان ذي قدر علی امة لها قدر و لعل اﷲ تعالیٰ انما ذکر لفظه القدر فی هذه السورة ثلاث مرات لهذا السبب
(تفسیر کبیر، 32 : 28)
’’اس رات میں اللہ تعالیٰ نے اپنی قابل قدر کتاب قابل قدر امت کے لئے صاحبِ قدر رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی معرفت نازل فرمائی۔ یہی وجہ ہے کہ اس سورت میں لفظ قدر، تین دفعہ آیا ہے۔‘‘
۔ لفظ قدر تنگی کے معنی میں بھی استعمال ہوتا ہے۔ اس معنی کے لحاظ سے اسے قدر والی کہنے کی وجہ یہ ہے کہ اس رات آسمان سے فرش زمین پر اتنی کثرت کے ساتھ فرشتوں کا نزول ہوتا ہے کہ زمین تنگ ہوجاتی ہے۔
(تفسیر الخازن، 4 : 395)
امام ابوبکر الوراق ’’قدر‘‘ کی وجہ بیان کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ یہ رات عبادت کرنے والے کو صاحب قدر بنا دیتی ہے اگرچہ وہ پہلے اس لائق نہ تھا۔
(القرطبی، 20 : 131)
یہ رات کیوں عطا ہوئی؟
اس رات کے عطا کئے جانے کا سب سے اہم سبب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اس اُمت پر شفقت اور آپ کی غم خواری ہے۔ موطا امام مالک رحمۃ اللہ علیہ میں ہے کہ

ان رسول اﷲ صلی الله عليه وآله وسلم اری اعمار الناس قبله او ماشاء اﷲ من ذالک فکانه تقاصر اعمار امته عن ان لا يبغلوا من العمل مثل الذی بلغ غيرهم فی طول العمر
موطا امام مالک، کتاب الصيام باب ماجاء فی ليلة القدر
’’جب رسول پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو سابقہ لوگوں کی عمروں پر آگاہ فرمایا گیا تو آپ نے ان کے مقابلے میں اپنی امت کے لوگوں کی عمر کو کم دیکھتے ہوئے یہ خیال فرمایا کہ میری امت کے لوگ اتنی کم عمر میں سابقہ امتوں کے برابر عمل کیسے کرسکیں گے؟‘‘
جب اللہ تعالیٰ نے آپ کے مقدس دل کو اس معاملہ میں ملول و پریشان دیکھا تو
فاعطاه ليلة القدر خير من الف شهر
موطا امام مالک کتاب الصيام، باب ماجاء فی ليلة القدر
’’پس آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو لیلۃ القدر عطا فرما دی جو ہزار مہینے سے افضل ہے۔‘‘
اس کی تائید حضرت ابن عباس رضی اﷲ عنہما سے منقول روایت سے بھی ہوتی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ اقدس میں بنی اسرائیل کے ایک ایسے شخص کا تذکرہ کیا گیا جس نے ایک ہزار ماہ تک اللہ تعالیٰ کی راہ میں جہاد کیا تھا۔
فعجب رسول اﷲ صلی الله عليه وآله وسلم لذالک و تمنی ذالک لامته فقال يا رب جعلت امتی اقصر الاعمار واقلها اعمالا فاعطاه اﷲ ليلة القدر
(تفسیر الخازن، 4 :397)
’’تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس پر تعجب فرمایا اور اپنی امت کے لئے آرزو کرتے ہوئے جب یہ دعا کی کہ اے میرے رب میری امت کے لوگوں کی عمریں کم ہونے کی وجہ سے نیک اعمال بھی کم ہوں گے تو اس پر اللہ تعالیٰ نے شب قدر عنایت فرمائی۔‘‘
ایک اور روایت یہ بھی ہے کہ ایک مرتبہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے صحابہ کرام رضوان اللہ اجمعین کے سامنے مختلف شخصیات حضرت ایوب، حضرت ذکریا، حضرت حزقیل، حضرت یوشع علیہم السلام کا تذکرہ کرتے ہوئے فرمایا کہ ان حضرات نے اَسی اَسی سال اللہ تعالیٰ کی عبادت کی اور پلک جھپکنے کے برابر بھی اللہ تعالیٰ کی نافرمانی نہیں کی۔ صحابہ کرام کو ان برگزیدہ ہستیوں پر رشک آیا۔ امام قرطبی رحمۃ اللہ علیہ لکھتے ہیں کہ اسی وقت جبرائیل علیہ السلام آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ اقدس میں حاضر ہوئے اور عرض کی :
يا محمد! عجببت امتک من عبادة هولاء النفر ثمانين سنه فقد انزل اﷲ عليک خيرا من ذالک : ثم قرا انا انزلناه فی ليلة القدر فسر بذالک رسول اﷲ صلی الله عليه وآله وسلم
(القرطبی، 20 : 130)
’’اے محمد مصطفیٰ ( صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ) آپ کی امت کے لوگ ان سابقہ لوگوں کی اَسی اَسی سالہ عبادت پر رشک کر رہے ہیں تو آپ کے رب نے آپ کو اس سے بہتر عطا فرما دیا ہے اور پھرقرات کی إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةِ الْقَدْرِO اس پر رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا چہرہ اقدس فرط مسرت سے چمک اٹھا۔‘‘
چنانچہ اللہ تعالیٰ نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے طفیل یہ کرم فرمایا کہ اس امت کو لیلۃ القدر عنایت فرما دی اور اس کی عبادت کو 80 نہیں بلکہ 83 سال چار ماہ سے بڑھ کر قرار دیا۔
امتِ مصطفوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خصوصیت
لیلۃ القدر فقط آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی امت کی خصوصیت ہے۔ امام جلال الدین سیوطی رحمۃ اللہ علیہ حضرت انس رضی اللہ عنہ سے نقل کرتے ہیں کہ رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :

ان اﷲ وهب لامتی ليلة القدر لم يعطها من کان قبلهم
(درمنثور، 6 :371)
’’یہ مقدس رات اللہ تعالیٰ نے فقط میری امت کو عطا فرمائی ہے سابقہ امتوں میں سے یہ شرف کسی کو بھی نہیں ملا۔‘‘
پہلی امتوں میں عابد کسے کہا جاتا تھا؟
مفسرین کرام لکھتے ہیں کہ پہلی امتوں میں عابد اسے قرار دیا جاتا تھا جو ہزار ماہ تک اللہ تعالیٰ کی عبادت کرتا۔ لیکن نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے صدقہ میں اس امت کو یہ فضیلت حاصل ہوئی کہ وہ فقط ایک رات کی عبادت سے ہی اس سے بہتر مقام حاصل کر لیتی ہے :
قيل ان العابد کان فيما مضی يسمي عابدا حتي يعبد اﷲ الف شهر فجعل اﷲ تعالیٰ لامة محمد صلی الله عليه وآله وسلم عبادة ليلة خير من الف شهر کانوا يعبدونها
(فتح القدیر، للشوکانی، 5 : 472)
’’سابقہ امتوں کا عابد وہ شخص ہوتا جو ایک ہزار ماہ تک اللہ تعالیٰ کی عبادت کرتا تھا لیکن اس کے مقابلے میں اللہ تعالیٰ نے اس امت کے افراد کو یہ شب قدر عطا کر دی جس کی عبادت اس ہزار ماہ سے بہتر قرار دی گئی۔‘‘
گویا یہ عظیم نعمت بھی سرکارِ دوجہاں صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی غلامی کے صدقہ میں امت کو نصیب ہوئی ہے۔
فضیلت شب قدر۔ ۔ ۔ احادیث کی روشنی میں
سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا 

. من قام ليلة القدر ايمانا و احتسابا غفرله ما تقدم من ذنبه
(صحیح بخاری، 1 : 270)
’’جس شخص نے شب قدر میں اجر و ثواب کی امید سے عبادت کی اس کے سابقہ گناہ معاف کردیئے جاتے ہیں۔‘‘
اس ارشاد نبوی میں جہاں لیلۃ القدر کی ساعتوں میں ذکر و فکر، عبادت و طاعت کی تلقین کی گئی ہے وہاں اس بات کی طرف بھی متوجہ کیا گیا ہے کہ عبادت سے محض اللہ تعالیٰ کی خوشنودی مقصود ہو، ریاکاری اور بدنیتی نہ ہو پھر یہ کہ آئندہ عہد کرے کہ برائی کا ارتکاب نہیں کروں گا۔ چنانچہ اس شان کے ساتھ عبادت کرنے والے بندے کے لئے یہ رات مژدہ مغفرت بن کر آتی ہے۔
۔ حضرت سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رمضان المبارک کی آمد پر ایک مرتبہ رسول پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :
ان هذا الشهر قد حضرکم وفيه ليلة خير من الف شهر من حرمها فقد حرم الخير کله ولا يحرم خيرها الا حرم الخير
(ابن ماجہ، السنن : 20)
’’یہ جو ماہ تم پر آیا ہے اس میں ایک ایسی رات ہے جو ہزار ماہ سے افضل ہے جو شخص اس رات سے محروم رہ گیا گویا وہ سارے خیر سے محروم رہا اور اس رات کی بھلائی سے وہی شخص محروم رہ سکتا ہے جو واقعتًا محروم ہو۔‘‘
ایسے شخص کی محرومی میں واقعتًا کیا شک ہو سکتا ہے جو اتنی بڑی نعمت کو غفلت کی وجہ سے گنوا دے۔ جب انسان معمولی معمولی باتوں کے لئے کتنی راتیں جاگ کر گزار لیتا ہے تو اسی سال کی عبادت سے افضل عبادت کے لئے چند راتیں کیوں نہ جاگے؟
۔ حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے لیلۃ القدر کی فضیلت بیان کرتے ہوئے فرمایا :
اذا کان ليلة القدر نزل جبرئيل عليه السلام فی کبکة من الملائکة يصلون علی کل عبد قائم او قاعد يذکر اﷲ عزوجل
’’شب قدر کو جبرائیل امین فرشتوں کے جھرمٹ میں زمین پر اتر آتے ہیں اور اس شخص کے لئے دعائے مغفرت کرتے ہیں جو کھڑے بیٹھے (کسی حال میں) اﷲ کو یاد کر رہا ہو۔‘‘
اسی بات کو سورہ القدر میں ان الفاظ کے ساتھ بیان کیا گیا ہے :
تَنَزَّلُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ فِيهَا بِإِذْنِ رَبِّهِم مِّن كُلِّ أَمْرٍO
(القدر، 97 : 4)
’’اس (رات) میں فرشتے اور روح الامین (جبرائیل) اپنے رب کے حکم سے (خیر و برکت کے) ہر امر کے ساتھ اترتے ہیںo‘‘
شب قدر کو مخفی کیوں رکھا گیا؟
اتنی اہم اور بابرکت رات کے مخفی ہونے کی متعدد حکمتیں بیان کی گئی ہیں ان میں سے چند یہ ہیں۔

دیگر اہم مخفی امور مثلًا اسم اعظم، جمعہ کے روز قبولیتِ دعا کی گھڑی کی طرح اس رات کو بھی مخفی رکھا گیا۔
اگر اسے مخفی نہ رکھا جاتا تو عمل کی راہ مسدود ہو جاتی اور اسی رات کے عمل پر اکتفا کر لیا جاتا، ذوق عبادت میں دوام کی خاطر اس کو آشکار نہیں کیا گیا۔
 اگر کسی مجبوری کی وجہ سے کسی انسان کی وہ رات رہ جاتی تو شاید اس صدمے کا ازالہ ممکن نہ ہوتا۔
۔ اﷲ تعالیٰ کو چونکہ بندوں کا رات کے اوقات میں جاگنا اور بیدار رہنا محبوب ہے اس لئے رات کی تعیین نہ فرمائی تاکہ اس کی تلاش میں متعدد راتیں عبادت میں گزاریں۔
5 عدم تعیین کی وجہ گنہگاروں پر شفقت بھی ہے کیونکہ اگر علم کے باوجود اس رات میں گناہ سرزد ہوتا تو اس سے لیلۃ القدر کی عظمت مجروح کرنے کا جرم بھی لکھا جاتا۔
شب قدر کا وظیفہ
حضرت عائشہ رضی اﷲ عنہا سے مروی ہے کہ میں نے رسالت مآب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے عرض کیا کہ شب قدر کا وظیفہ کیا ہونا چاہئے؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ان الفاظ کی تلقین فرمائی

اللهم انک عفو تحب العفو فاعف عنی
’’اے اﷲ! تو معاف کر دینے والا ہے اور معافی کو پسند فرمانے والا ہے۔ پس مجھے بھی معاف کردے۔‘‘

Post a Comment

0 Comments