Life of Fatima Al Zahra | سیرت فاطمہ الزہرہ رضی اللہ عنہا

Life of Fatima Al Zahra


Life of Fatima Al Zahra | سیرت فاطمہ الزہرہ رضی اللہ عنہا
 Fatima Al-Zahra

Ramadan is the day of death

Hazrat Fatima (RA) whose well-known name is Fatima Al-Zahra was the daughter of Hazrat Muhammad Mustafa (PBUH) and Khadija bint Khuwaylid (RA). To all Muslims, she is a chosen person. He was born on Friday, the 20th of Jamadi al-Thani, in the fifth year of Ba'ath. She was married to Hazrat Ali Ibn Abi Talib, from whom she gave birth to two sons, Hassan and Hussain, and two daughters, Zainab and Umm Kulthoom. He died in 632 AD, a few months after the death of his father, Hazrat Muhammad (PBUH).

She was trained in the family of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) by Hazrat Muhammad (peace and blessings of Allaah be upon him), Hazrat Khadijah (ra), Fatima bint Asad (ra), Umm Salma (ra) and Umm al-Fadl (ra). Uncle Abbas's wife), Umm Hani (Abu Talib's sister), Asmaa bint Umays (wife of Jafar Tayyar), Safia bint Hamza etc. at different times. After the death of Hazrat Khadija (RA), Hazrat Muhammad (PBUH) chose Fatima bint Asad (RA) for his training and upbringing. When he also passed away, Hazrat Muhammad (PBUH) gave the responsibility of training him to Hazrat Umm Salma (RA).

Titles and nicknames


Among her famous titles are Zahra and Sayyid al-Nisa 'al-Alamin (leaders of women of all worlds) and Batool. Popular surnames are Umm al-Imam, Umm al-Sabtin and Umm al-Hasnain. Her most famous title was Syedat al-Nisa 'al-Alamin because of a famous hadith in which Hazrat Muhammad told her that she is the Syeda (leader) of women in this world and in the hereafter. Apart from this, Khatun-e-Jannat, Al-Tahira, Al-Zakiya, Al-Mardiya, Al-Sayyida etc. are also found as titles.

Living conditions


Childhood: Hazrat Fatima Al-Zahra (RA) was initially trained by the Holy Prophet (PBUH) himself and Hazrat Khadija (RA). In addition, the first Muslim women were involved in their training. His mother Hazrat Khadija passed away in her childhood. They saw the early days of Islam and endured all the hardships that the Prophet (peace be upon him) endured at the hands of the Quraysh in the early days. According to a tradition, the Prophet Muhammad (peace be upon him) was once in a state of prostration in the Ka'bah when Abu Jahl and his companions threw a camel's head at him. When Hazrat Fatima (RA) got the news, she came and washed her back with water even though she was deaf at that time. At that time, when she was crying, Prophet Muhammad (peace be upon him) used to say to her, "O father, don't cry, Allah will help your father."

The migration to Madinah took place in his childhood. Migration took place on the tenth day of Ba'ath in Rabi-ul-Awal. Upon reaching Madinah, Hazrat Muhammad (PBUH) gave Zaid bin Haritha and Abu Rafi '500 dirhams and camels to Hazrat Fatima (RA), Hazrat Fatima bint Asad (RA), Hazrat Sooda (RA) and Hazrat Ayesha (RA) from Makkah. She was called, so she reached Madinah a few days later. According to some other traditions, Imam Ali (as) brought them later. Until 2 AH, he was under the tutelage of Hazrat Fatima bint Asad. In 2 AH, the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) married Hazrat Umm Salma and gave her to Hazrat Fatima (ra) in his training.

Hazrat Umm Salma (RA) said that Hazrat Fatima (RA) was entrusted to me. I wanted to teach them literature but by God Fatima was more polite than me and knew all things better than me. The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) used to love him very much. Her color was changing with the intensity of hunger. When she saw him, she said, "Daughter, come here." When you approached, the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) prayed: O Lord who satisfies the hungry, O Lord who exalts the lowly, end the intensity of Fatima's hunger. After this prayer, the face of Hazrat Fatima (RA) turned yellow, blood started running on her face and she started looking happy. Hazrat Fatima (RA) herself says that after that I will never be hungry again. The severity of did not bother.

Life of Fatima Al Zahra | سیرت فاطمہ الزہرہ رضی اللہ عنہا
Fatima Al-Zahra

Wedding

According to some narrations, the Holy Prophet (sws) said to Hazrat Ali (ra): O Ali, God has commanded me to marry Fatima to you. Do you agree He said yes, so the marriage took place. The same narration has been narrated in Sahah by Hazrat Abdullah Ibn Masood, Hazrat Anas bin Malik and Hazrat Umm Salma. In another narration, it is narrated from Hazrat Abdullah bin Masood (may Allah be pleased with him) that the Prophet (peace and blessings of Allah be upon him) said: Allah has commanded me to marry Fatima (may Allah be pleased with her) to Ali (may Allah be pleased with her). According to some narrations, Hazrat Ali (RA) himself expressed his desire and the Holy Prophet (PBUH) accepted it and said: Hello and welcome.

Hazrat Ali Al-Murtada (RA) and Hazrat Fatima Al-Zahra (PBUH) got married on 1st Dhul-Hijjah 2 AH. According to some other traditions, it is narrated from Imam Muhammad Baqir (as) and Imam Jafar Sadiq (as) that the marriage took place in Ramadan and the leave took place in the same year, Dhu al-Hijjah. For the expenses of the marriage, Hazrat Ali (as) paid Hazrat He sold it to Usman Ghani and later Hazrat Usman Ghani returned the same armor to him. This money was handed over by Hazrat Ali (RA) to the Messenger of Allah (PBUH) which was found to be the seal of Hazrat Fatima (RA). While in some other traditions the seal was 480 dirhams.

Dowry

For the dowry, the Prophet sent Hazrat Muqdad Ibn Aswad to buy things by giving money and sent Hazrat Salman Farsi and Hazrat Bilal to help him. They brought things and placed them in front of the Holy Prophet (sws). Hazrat Asma bint Umays was also present at that time. The dowry list in various traditions includes a shirt, a muqanna (or head covering cloth), a black blanket, a bed made of palm leaves, two floors of thick sackcloth, four small pillows, a hand mill, A copper vessel for washing clothes, a leather musk, a wooden vessel for drinking water (Badia), a vessel of palm leaves on which the soil is turned, two earthenware bowls, earthenware jars, laying on the ground A leather, a white sheet and a loot. Seeing this short dowry, tears came to the eyes of the Messenger of Allah and he prayed: O Allah, bless those whose best earthen vessels are made of clay. This dowry was bought with the same amount that Hazrat Ali (RA) had obtained by selling his armor.

Leave

A few months after the marriage, on the first of Dhul-Hijjah, he left. In the farewell procession, Hazrat Fatima (RA) rode on a boat called Ashhab, which was headed by Hazrat Salman Farsi (RA). The spouses were in front of the procession. The Bani Hashim were with the procession for naked swords. After walking around the mosque, Hazrat Fatima (RA) was unloaded at the house of Hazrat Ali (RA). The Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) asked for water and supplicated on it. I will give. The wives of the devotees recited rajs in front of the procession. The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) told the women of the family of Abd al-Muttalib and the Muhajireen and the Ansaar to recite Rajj, say the praises and glorifications of Allaah, and not to say or do anything that would offend Allaah. Hazrat Umm Salma, Hazrat Ayesha and Hazrat Hafsa recited Rajz respectively. The following are the recitations of the wives of the saints.

The pride of Hazrat Umm Salma

O neighbors! May Allah's help be with you and give thanks to Him in every situation. And remember the troubles and afflictions which Allah has bestowed upon you. The Lord of the heavens brought us out of the darkness of disbelief and gave us all kinds of luxuries. O neighbors. Come with the ladies of the world on whom their aunts and uncles are scattered. O daughter of the exalted Prophet whom Allah has bestowed on all people through revelation and prophethood.

Hazrat Ayesha (RA): O women! Wear a chador and remember that this thing is considered good in the community. Remember the Lord who, along with His other grateful servants, set us apart for His religion. Praise be to Allah for His bounty and thanks be to Him Who is the Lord of Glory and Power. Take Fatima Zahra with you, for Allah has raised her remembrance and appointed for her a pure man who is from her own family.

The pride of Hazrat Hafsa

O Fatima! You are better than all the women in the world of humanity. Your face is like the moon. God has given you superiority over the whole world. With the virtue of the person whose grace and honor is mentioned in the verses of Surah Az-Zumar. Allah has married you to a virtuous young man, that is, to Ali, who is better than all people. So, my neighbors. Take Fatima with you because she is the honorable daughter of a great father.

After marriage: After your marriage, Quraysh women used to taunt him that he was married to a poor man. When he complained to the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him), the Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) took Fatima's hand and reassured her, “O Fatima, it is not like that, but I have married you to such a person. Which is the first in Islam, the most perfect in knowledge and the best in humility. Do you not know that Ali is my brother in this world and in the hereafter? On hearing this, Hazrat Fatima (RA) started laughing and asked, "O Messenger of Allah, may I be pleased with him and be happy with him."

Your life after marriage is an example for the feminist class. You did all the housework yourself but never complained. Nor did he ask for a helper or a maid. In 7 AH, the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) bestowed a slave girl known as Hazrat Fiza. Hazrat Fatima (RA) had arranged shifts with them, ie one day she would work and one day Hazrat Fiza (RA) would work. Once the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) came to her house and saw her grinding the baby in her lap. The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: Give a task to Fiza. He replied that Baba Jan, today is not the day of Fiza's turn.

He also had an ideal relationship with Hazrat Ali. Never demanded anything from them. Once Hazrat Fatima (RA) fell ill and Hazrat Ali (RA) asked her if she wanted to eat something. You said that my father has insisted that I do not ask you anything, you may not be able to fulfill it and you will be sad. So I do not say anything. When Hazrat Ali (RA) swore, he mentioned pomegranate.

He saw many wars in which Hazrat Ali played a significant role but he never wanted them to take part in the war and stay behind. In addition, in the battle of Uhud, Hazrat Ali (RA) suffered sixteen wounds and the blessed face of the Prophet (PBUH) was also wounded, but he did not show any fear and he applied ointment, treatment and swords. Performed cleaning duties.

Children

God blessed you with two sons and two daughters. He had two sons, Hazrat Hassan bin Ali and Hazrat Hussain bin Ali, and daughters Zainab bint Ali and Umm Kulthum bint Ali. The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) used to call their two sons his sons and loved them dearly. And it was said that Hassan and Hussain are the leaders of the soldiers of Paradise. His name was also given by Hazrat Muhammad (PBUH) himself.

Mubahila incident: Mubahila is a famous incident and is one of the few incidents in which Hazrat Fatima (RA) had to leave her house apart from fighting. When the Christians of Najran came to meet the Prophet Muhammad (peace be upon him) and argued that Jesus (peace be upon him) was the son of God and did not believe in any way, God revealed the following verse in the Qur'an:

“O Prophet! When the knowledge has come to you, say to those who argue with you, "Let us call our children, our wives, and our souls, and then pray to God, and curse the liars." ۔

(Surat al-Imran: 61)

After this it was decided that the Christians would bring their chosen people and the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) would come with his chosen servants and argue and that would be the decision. The next morning, the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) came with Hazrat Hasan (ra) and Hazrat Hussain (ra) wrapped in a chador and took Hazrat Ali (ra) and Hazrat Fatima (ra) with him. Seeing these people, the Christians were overwhelmed and their leader said, "I see such faces that if they pray to God, not a single Christian on earth will be safe."

Days of Mustafa's death

Umm Al-Mumineen It is narrated from Hazrat Ayesha (may Allah be pleased with her) that before her death, the Prophet (peace and blessings of Allah be upon him) called Hazrat Fatima (may Allah be pleased with her) and said something in her ear which made her weep. Then he whispered again and she started smiling. Hazrat Ayesha (RA) says that when I asked the reason, she said that first my father informed me of his death and I started crying. Then he said that the first time I met him, I started smiling.

In another narration it is narrated from Yahya bin Jada that the Holy Prophet (sws) said to Hazrat Fatima (sws) that once a year the Qur'an was recited by Gabriel Amin but this time he did it twice. went. It tells me that my death is near. You will be the first of my family to come and meet me. She was saddened to hear this. The Messenger of Allah, may Allah bless him and grant him peace, said, "Aren't you happy that you are the chief of the women of Paradise?" Hearing this, she started smiling.

Death


The demise of the Prophet (peace be upon him) was a great tragedy which proved to be a great mountain for Hazrat Fatima Al-Zahra (peace be upon her) and she passed away a few months after the death of Hazrat Muhammad (peace be upon him). Its date is 3 Jamadi al-Thani 11 AH. He is buried in Janat al-Baqi 'where a shrine was built which was martyred by the Saudi government on 8 Shawwal 1344 AH.

Virtues in Hadiths


Hazrat Hudhaifah (may Allah be pleased with him) narrates that the Messenger of Allah (may peace be upon him) said: An angel who had never landed on earth before that night asked permission from his Lord to come to greet me and give me this good news. That Fatima (peace be upon her) is the leader of all the women of the people of Paradise and Hassan (may Allah be pleased with her) and Hussain (may Allah be pleased with her) are the leaders of all the men of Paradise.

It is narrated on the authority of Hazrat Masoor bin Mukhramah that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: Fatima is a part of my soul, so whoever angered her angered me.

Hazrat Abdullah bin Zubair (may Allah be pleased with him) narrates that the Prophet (peace and blessings of Allah be upon him) said: Surely Fatima (peace be upon her) is a part of my soul. What hurts him hurts me, and what hurts him hurts me.

It is narrated on the authority of Abu Hanzala that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: Surely Fatima (peace and blessings of Allaah be upon her) is a part of my soul. He who persecuted me persecuted me.
Hazrat Soban, the freed slave of the Holy Prophet (sws), said that when the Holy Prophet (sws) intended to travel, he would go on a journey after talking to all of his family. She would have been Hazrat Fatima (RA) and the first person she would have visited on her return from the journey would have been Hazrat Fatima (RA).

According to another well-known hadeeth (known as the butcher's hadeeth), the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) gathered Hazrat Fatima, Hazrat Ali (ra) and Hassan (ra) and Hussain (ra) under a Yemeni shroud. And he said: Surely Allah intends to remove from you, O my family, the abomination and purify it as it should be purified.

May God Almighty make us all the manifestation of the biography of Fatima Al-Zahra, Amen and Amen.

سیرت فاطمہ الزہرہ رضی اللہ عنہا


Life of Fatima Al Zahra | سیرت فاطمہ الزہرہ رضی اللہ عنہا
 Fatima Al-Zahra

رمضان یوم وصال سیدہ

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالی عنہا جن کا معروف نام فاطمۃ الزھراء ہے حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور خدیجہ بنت خویلد رضی اللہ تعالیٰ عنہا کی بیٹی تھیں۔تمام مسلمانوں کے نزدیک آپ ایک برگزیدہ ہستی ہیں۔ آپ کی ولادت 20 جمادی الثانی بروزجمعہ بعثت کے پانچویں سال میں مکہ میں ہوئی۔ آپ کی شادی حضرت علی ابن ابی طالب رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے ہوئی جن سے آپ کے دو بیٹے حسن رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور دو بیٹیاں زینب رضی اللہ تعالیٰ عنہا اور ام کلثوم رضی اللہ تعالیٰ عنہا پیدا ہوئیں۔ آپ کی وفات اپنے والد گرامی حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی وفات کے کچھ ماہ بعد 632ء میں ہوئی۔
آپ کی تربیت خاندانِ رسالت میں ہوئی جو حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم، حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا ، فاطمہ بنت اسد رضی اللہ عنہا، ام سلمیٰ رضی اللہ عنہا، ام الفضل رضی اللہ عنہا (حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے چچا عباس کی زوجہ)، ام ہانی رضی اللہ عنہا (حضرت ابوطالب کی ہمشیرہ)، اسماء بنت عمیس رضی اللہ عنہا (زوجہ جعفرطیار رضی اللہ عنہا)، صفیہ بنت حمزہ رضی اللہ عنہا وغیرہ نے مختلف اوقات میں کی۔ حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے انتقال کے بعد حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے ان کی تربیت و پرورش کے لیے فاطمہ بنت اسد رضی اللہ عنہا کا انتخاب کیا۔ جب ان کا بھی انتقال ہو گیا تو اس وقت حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے حضرت ام سلمیٰ رضی اللہ عنہا کو ان کی تربیت کی ذمہ داری دی۔

القاب اور کنیت

آپ کے مشہور القاب میں زھرا اور سیدۃ النساء العالمین (تمام جہانوں کی عورتوں کی سردار) اور بتول ہیں۔ مشہور کنیت ام الائمہ، ام السبطین اور ام الحسنین ہیں۔ آپ کا مشہور ترین لقب سیدۃ النساء العالمین ایک مشہور حدیث کی وجہ سے پڑا جس میں حضرت محمد نے ان کو بتایا کہ وہ دنیا اور آخرت میں عورتوں کی سیدہ (سردار) ہیں۔ اس کے علاوہ خاتونِ جنت، الطاہرہ، الزکیہ، المرضیہ، السیدہ وغیرہ بھی القاب کے طور پر ملتے ہیں۔

حالاتِ زندگی

بچپن: حضرت فاطمہ الزھرا رضی اللہ تعالیٰ عنہا کی ابتدائی تربیت خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے کی۔ اس کے علاوہ ان کی تربیت میں اولین مسلمان خواتین شامل رہیں۔ بچپن میں ہی ان کی والدہ حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا انتقال ہو گیا۔ انہوں نے اسلام کا ابتدائی زمانہ دیکھا اور وہ تمام تنگی برداشت کی جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے ابتدائی زمانہ میں قریش کے ہاتھوں برداشت کی۔ ایک روایت کے مطابق ایک دفعہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کعبہ میں حالتِ سجدہ میں تھے جب ابوجہل اور اس کے ساتھیوں نے ان پر اونٹ کی اوجھڑی ڈال دی۔ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو خبر ملی تو آپ نے آ کر ان کی کمر پانی سے دھوئی حالانکہ آپ اس وقت کم سن تھیں۔ اس وقت آپ روتی تھیں تو حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ان کو کہتے جاتے تھے کہ اے جانِ پدر رو نہیں اللہ تیرے باپ کی مدد کرے گا۔
ان کے بچپن ہی میں ہجرتِ مدینہ کا واقعہ ہوا۔ ربیع الاول میں بعثت کی دس تاریخ کو ہجرت ہوئی۔ مدینہ پہنچ کر حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے زید بن حارثہ اور ابو رافع کو 500 درھم اور اونٹ دے کر مکہ سے حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا، حضرت فاطمہ بنت اسد رضی اللہ عنہا، حضرت سودہ رضی اللہ عنہا اور حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کو بلوایا چنانچہ وہ کچھ دن بعد مدینہ پہنچ گئیں۔ بعض دیگر روایات کے مطابق انہیں حضرت علی علیہ السلام بعد میں لے کر آئے۔ 2 ہجری تک آپ حضرت فاطمہ بنت اسد رضی اللہ عنہا کی زیرِ تربیت رہیں۔ 2ھ میں رسول اللہ نے حضرت ام سلمیٰ سے عقد کیا تو حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو ان کی تربیت میں دے دیا۔
حضرت ام سلمیٰ رضی اللہ عنہا نے فرمایا کہ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو میرے سپرد کیا گیا۔ میں نے انہیں ادب سکھانا چاہا مگر خدا کی قسم فاطمہ تو مجھ سے زیادہ مودب تھیں اور تمام باتیں مجھ سے بہتر جانتی تھیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ان سے بہت محبت کرتے تھے۔عمران بن حصین کی روایت ہے کہ ایک دفعہ میں رسول اللہ کے ساتھ بیٹھا تھا کہ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا جو ابھی کم سن تھیں تشریف لائیں۔ بھوک کی شدت سے ان کا رنگ متغیر ہو رہا تھا۔آنحضرت نے دیکھا تو کہا کہ بیٹی ادھر آو۔ جب آپ قریب آئیں تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے دعا فرمائی کہ اے بھوکوں کو سیر کرنے والے پروردگار، اے پستی کو بلندی عطا کرنے والے مالک، فاطمہ کے بھوک کی شدت کو ختم فرما دے۔ اس دعا کے بعد حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے چہرے کی زردی مبدل بسرخی ہو گئی، چہرے پر خون دوڑنے لگا اور آپ ہشاش بشاش نظر آنے لگیں۔خود حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا بیان ہے کہ اس کے بعد مجھے پھر کبھی بھوک کی شدت نے پریشان نہیں کیا۔

شادی

 بعض روایات کے مطابق حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے فرمایا کہ اے علی خدا کا حکم ہے کہ میں فاطمہ کی شادی تم سے کر دوں۔ کیا تمہیں منظور ہے۔ انہوں نے کہا ہاں چنانچہ شادی ہو گئی۔ یہی روایت صحاح میں حضرت عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ عنہا، حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ اور حضرت ام سلمیٰ رضی اللہ عنہ نے کی ہے۔ ایک اور روایت میں حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا: اللہ نے مجھے حکم فرمایا ہے کہ میں فاطمہ سلام اللہ علیہا کا نکاح علی رضی اللہ عنہ سے کردوں۔ بعض روایات کے مطابق حضرت علی رضی اللہ عنہ نے خود خواہش کا اظہار فرمایا تو حضور نے قبول فرمالیا اور کہا: مرحباً و اھلاً۔
حضرت علی المرتضیٰ رضی اللہ عنہ و حضرت فاطمۃ الزہراء سلام اللہ علیہا کی شادی یکم ذی الحجہ 2ھ کو ہوئی۔ کچھ اور روایات کے مطابق امام محمد باقر علیہ السلام و امام جعفر صادق علیہ السلام سے مروی ہے کہ نکاح رمضان میں اور رخصتی اسی سال ذی الحجہ میں ہوئی۔شادی کے اخراجات کے لیے حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنی زرہ 500 درھم میں حضرت عثمانِ غنی رضی اللہ عنہ کے ہاتھ بیچ دی اور بعد ازاں حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ نے وہی زرہ تحفۃً انہیں لوٹادی۔ یہ رقم حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے رسول اللہ کے حوالے کر دی جو حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا مہر قرار پایا۔ جبکہ بعض دیگر روایات میں مہر 480 درھم تھا۔

جہیز

 جہیز کے لیے رسول اللہ نے حضرت مقداد ابن اسود رضی اللہ عنہا کو رقم دے کر اشیاء خریدنے کے لیے بھیجا اور حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت بلال رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو مدد کے لیے ساتھ بھیجا۔ انہوں نے چیزیں لا کر حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے سامنے رکھیں۔ اس وقت حضرت اسماء بنت عمیس رضی اللہ عنہا بھی موجود تھیں۔ مختلف روایات میں جہیز کی فہرست میں ایک قمیص، ایک مقنع (یا خمار یعنی سر ڈھانکنے کے لیے کپڑا)، ایک سیاہ کمبل، کھجور کے پتوں سے بنا ہوا ایک بستر، موٹے ٹاٹ کے دو فرش، چار چھوٹے تکیے، ہاتھ کی چکی، کپڑے دھونے کے لیے تانبے کا ایک برتن، چمڑے کی مشک، پانی پینے کے لیے لکڑی کا ایک برتن(بادیہ)، کھجور کے پتوں کا ایک برتن جس پر مٹی پھیر دیتے ہیں، دو مٹی کے آبخورے، مٹی کی صراحی، زمین پر بچھانے کا ایک چمڑا، ایک سفید چادر اور ایک لوٹا شامل تھے۔ یہ مختصر جہیز دیکھ کر رسول اللہ کی آنکھوں میں آنسو آ گئے اور انہوں نے دعا کی کہ اے اللہ ان پر برکت نازل فرما جن کے اچھے سے اچھے برتن مٹی کے ہیں۔ یہ جہیز اسی رقم سے خریدا گیا تھا جو حضرت علی رضی اللہ عنہ نے اپنی زرہ بیچ کر حاصل کی تھی۔

رخصتی

نکاح کے کچھ ماہ بعد یکم ذی الحجہ کو آپ سلام اللہ علیہا کی رخصتی ہوئی۔ رخصتی کے جلوس میں حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا اشہب نامی ناقہ پر سوار ہوئیں جس کے ساربان حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ تھے۔ ازواج مطہرات جلوس کے آگے آگے تھیں۔ بنی ھاشم ننگی تلواریں لیے جلوس کے ساتھ تھے۔ مسجد کے اردگرد چکر لگانے کے بعد حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے گھر میں اتارا گیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے پانی منگوایا اس پر دعائیں دم کیں اور علی رضی اللہ عنہ و فاطمہ سلام اللہ علیہا کے سر بازؤوں اور سینے پر چھڑک کر دعا کی کہ اے اللہ انہیں اور ان کی اولاد کو شیطان الرجیم سے تیری پناہ میں دیتا ہوں۔ ازواج مطہرات نے جلوس کے آگے رجز پڑھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے خاندان عبدالمطلب اور مہاجرین و انصار کی خواتین کو کہا کہ رجز پڑھیں خدا کی حمد و تکبیر کہیں اور کوئی ایسی بات نہ کہیں اور کریں جس سے خدا ناراض ہوتا ہو۔ بالترتیب حضرت ام سلمیٰ رضی اللہ عنہا، حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا اور حضرت حفصہ رضی اللہ عنہا نے رجز پڑھے۔ ازواج مطہرات نے جو رجز پڑھے وہ درج ذیل ہیں

حضرت ام سلمیٰ رضی اللہ عنہا کا رجز

اے پڑوسنو! چلو اللہ کی مدد تمہارے ساتھ ہے اور ہر حال میں اس کا شکر ادا کرو۔ اور جن پریشانیوں اور مصیبتوں کو دور کرکے اللہ نے احسان فرمایا ہے اسے یاد کرو۔ آسمانوں کے پروردگار نے ہمیں کفر کی تاریکیوں سے نکالا اور ہر طرح کا عیش و آرام دیا۔ اے پڑوسنو۔ چلو سیدہ زنانِ عالم کے ساتھ جن پر ان کی پھوپھیاں اور خالائیں نثار ہوں۔ اے عالی مرتبت پیغمبر کی بیٹی جسے اللہ نے وحی اور رسالت کے ذریعے سے تمام لوگوں پر فضیلت دی۔

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کا رجز

اے عورتو! چادر اوڑھ لو اور یاد رکھو کہ یہ چیز مجمع میں اچھی سمجھی جاتی ہے۔ یاد رکھو اس پروردگار کو جس نے اپنے دوسرے شکر گذار بندوں کے ساتھ ہمیں بھی اپنے دینِ حق کے لیے مخصوص فرمایا۔ اللہ کی حمد اس کے فضل و کرم پر اور شکر ہے اس کا جو عزت و قدرت والا ہے۔ فاطمہ زھرا رضی اللہ عنہا کو ساتھ لے کے چلو کہ اللہ نے ان کے ذکر کو بلند کیا ہے اور ان کے لیے ایک ایسے پاک و پاکیزہ مرد کو مخصوص کیا ہے جو ان ہی کے خاندان سے ہے۔
حضرت حفصہ رضی اللہ عنہا کا رجز:اے فاطمہ! تم عالم انسانیت کی تمام عورتوں سے بہتر ہو۔ تمہارا چہرہ چاند کی مثل ہے۔ تمہیں اللہ نے تمام دنیا پر فضیلت دی ہے۔ اس شخص کی فضیلت کے ساتھ جس کا فضل و شرف سورہ زمر کی آیتوں میں مذکور ہے۔ اللہ نے تمہاری تزویج ایک صاحب فضائل و مناقب نوجوان سے کی ہے یعنی علی رضی اللہ عنہ سے جو تمام لوگوں سے بہتر ہے۔ پس اے میری پڑوسنو۔ فاطمہ کو لے کر چلو کیونکہ یہ ایک بڑی شان والے باپ کی عزت مآب بیٹی ہے۔

شادی کے بعد

 آپ کی شادی کے بعد زنانِ قریش انہیں طعنے دیتی تھیں کہ ان کی شادی ایک غریب سے کردی گئی ہے۔ جس پر انہوں نے رسالت مآب سے شکایت کی تو اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا ہاتھ پکڑا اور تسلی دی کہ اے فاطمہ ایسا نہیں ہے بلکہ میں نے تیری شادی ایک ایسے شخص سے کی ہے جو اسلام میں سب سے اول، علم میں سب سے اکمل اور حلم میں سب سے افضل ہے۔ کیا تمہیں نہیں معلوم کہ علی میرا بھائی ہے دنیا اور آخرت میں؟۔ یہ سن کر حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا ہنسنے لگیں اور عرض کیا کہ یا رسول اللہ بابا جان میں اس پر راضی اور خوش ہوں۔
شادی کے بعد آپ کی زندگی طبقہ نسواں کے لیے ایک مثال ہے۔ آپ گھر کا تمام کام خود کرتی تھیں مگر کبھی حرفِ شکایت زبان پر نہیں آیا۔ نہ ہی کوئی مددگار یا کنیز کا تقاضا کیا۔ 7ھ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے ایک کنیز عنایت کی جو حضرت فضہ کے نام سے مشہور ہیں۔ ان کے ساتھ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے باریاں مقرر کی تھیں یعنی ایک دن وہ کام کرتی تھیں اور ایک دن حضرت فضہ رضی اللہ عنہا کام کرتی تھیں۔ ایک دفعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ان کے گھر تشریف لائے اور دیکھا کہ آپ رضی اللہ عنہ بچے کو گود میں لیے چکی پیس رہی ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا کہ ایک کام فضہ رضی اللہ عنہا کے حوالے کر دو۔ آپ نے جواب دیا کہ بابا جان آج فضہ کی باری کا دن نہیں ہے۔
آپ کے حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے بھی مثالی تعلقات تھے۔ کبھی ان سے کسی چیز کا تقاضا نہیں کیا۔ ایک دفعہ حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہابیمار پڑیں تو حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے پوچھا کہ کچھ کھانے کو دل چاہتا ہو تو بتاؤ۔ آپ نے کہا کہ میرے پدر بزرگوار نے تاکید کی ہے کہ میں آپ سے کسی چیز کا سوال نہ کروں، ممکن ہے کہ آپ اس کو پورا نہ کرسکیں اور آپ کو رنج ہو۔اس لیے میں کچھ نہیں کہتی۔ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے جب قسم دی تو انار کا ذکر کیا۔
آپ رضی اللہ عنہا نے کئی جنگیں دیکھیں جن میں حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے نمایاں کردار ادا کیا مگر کبھی یہ نہیں چاہا کہ وہ جنگ میں شریک نہ ہوں اور پیچھے رہیں۔ اس کے علاوہ جنگ احد میں حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے سولہ زخم کھائے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا چہرہ مبارک بھی زخمی ہوا مگر آپ نے کسی خوف و ہراس کا مظاہرہ نہیں کیا اور مرہم پٹی، علاج اور تلواروں کی صفائی کے فرائض سرانجام دیے۔

اولاد

 اللہ نے آپ کو دو بیٹوں اور دو بیٹیوں سے نوازا۔ دو بیٹے حضرت حسن بن علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت حسین بن علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور بیٹیاں زینب بنت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہا و ام کلثوم بنت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہا تھیں۔ ان کے دونوں بیٹوں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اپنا بیٹا کہتے تھے اور بہت پیار کرتے تھے۔ اور فرمایا تھا کہ حسن اور حسین جنت کے جوانوں کے سردار ہیں۔ ان کے نام بھی حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے خود رکھے تھے۔

واقعہ مباہلہ

 مباہلہ ایک مشہور واقعہ ہے اور ان چند واقعات میں سے ایک ہے جس میں حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو جنگ کے علاوہ گھر سے نکلنا پڑا۔ نجران کے مسیحی جب حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے ملنے آئے اور بحث کی کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام اللہ کے بیٹے ہیں اور کسی طرح نہ مانے تو اللہ نے قرآن میں درج ذیل آیت نازل کی:
’’اے پیغمبر! علم کے آجانے کے بعد جو لوگ تم سے بحث کریں ان سے کہہ دیجئے کہ آؤ ہم لوگ اپنے اپنے فرزند، اپنی اپنی عورتوں اور اپنے اپنے نفسوں کو بلائیں اور پھر خدا کی بارگاہ میں دعا کریں اور جھوٹوں پر خدا کی لعنت قرار دیں‘‘۔
(سوره آل عمران آيت: 61)
اس کے بعد مباہلہ کا فیصلہ ہوا کہ عیسائی اپنے برگزیدہ لوگوں کو لائیں گے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اپنے گرگزیدہ بندوں کے ساتھ آئیں گے اور مباہلہ کریں گے اور اسی طریقہ سے فیصلہ ہوگا۔ اگلی صبح رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اپنے ساتھ حضرت حسن رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو چادر میں لپیٹے ہوئے اور حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو لیے ہوئے آئے۔ ان لوگوں کو دیکھتے ہی عیسائی مغلوب ہو گئے اور ان کے سردار نے کہا کہ میں ایسے چہرے دیکھ رہا ہوں کہ اگر خدا سے بد دعا کریں تو روئے زمین پر ایک بھی عیسائی سلامت نہ رہے۔

ایام وصال مصطفی

ام المومنین حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے کہ وصال سے قبل مرض وصال میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا کو نزدیک بلا کر ان کے کان میں کچھ کہا جس پر وہ رونے لگیں۔اس کے بعد آپ نے پھر سرگوشی کی تو آپ رضی اللہ عنہا مسکرانے لگیں۔ حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا فرماتی ہیں کہ میں نے سبب پوچھا تو انہوں نے بتایا کہ پہلے میرے بابا نے اپنی موت کی خبر دی تو میں رونے لگی۔ اس کے بعد انہوں نے بتایا کہ سب سے پہلے میں ان سے جاملوں گی تو میں مسکرانے لگی۔
ایک اور روایت میں یحیٰ بن جعدہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے کہا کہ سال میں ایک مرتبہ حضرت جبرائیل امین سے قرآن کا دور ہوتا تھا مگر اس دفعہ دو مرتبہ کیا گیا۔ اس سے مجھے بتایا گیا ہے کہ میرا وصال قریب ہے۔ میرے اہل میں سے تم مجھے سب سے پہلے آ کر ملو گی۔ یہ سن کر آپ غمگین ہوئیں تو رسول اللہ نے فرمایا کہ کیا تم اس پر خوش نہیں ہو کہ تم زنان اہلِ جنت کی سردار ہو؟ یہ سن کر آپ رضی اللہ عنہا مسکرانے لگیں۔

وفات

رسول اللہ کا وصال ایک عظیم سانحہ تھا جو حضرت فاطمۃ الزہراء سلام اللہ علیہا کے لئے کوہ گراں ثابت ہوا اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی وفات کے کچھ ماہ بعد آپ سلام اللہ علیہا کی وفات ہوئی۔ اس کی تاریخ 3 جمادی الثانی 11ھ ہے۔ آپ جنت البقیع میں مدفون ہیں جہاں پر ایک روضہ بھی بنا ہوا تھا جسے سعودی حکومت نے 8 شوال 1344ھ کو شہید کردیا۔

احادیث میں فضائل

حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا کہ ایک فرشتہ جو اس رات سے پہلے کبھی زمین پر نہ اترا تھا اس نے اپنے پروردگار سے اجازت مانگی کہ مجھے سلام کرنے حاضر ہو اور یہ خوشخبری دے کہ فاطمہ سلام اللہ علیہا اہلِ جنت کی تمام عورتوں کی سردار ہے اور حسن رضی اللہ عنہ و حسین رضی اللہ عنہ جنت کے تمام جوانوں کے سردار ہیں۔
حضرت مسور بن مخرمہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا: فاطمہ میری جان کا حصہ ہے پس جس نے اسے ناراض کیا اس نے مجھے ناراض کیا۔
حضرت عبداللہ بن زبیر رضی اللہ عنہ بیان فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا: بے شک فاطمہ سلام اللہ علیہا میری جان کا حصہ ہے۔ اسے تکلیف دینے والی چیز مجھے تکلیف دیتی ہے اور اسے مشقت میں ڈالنے والا مجھے مشقت میں ڈالتا ہے۔
حضرت ابو حنظلہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا: بے شک فاطمہ سلام اللہ علیہا میری جان کا حصہ ہے۔ جس نے اسے ستایا اس نے مجھے ستایا۔
حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے آزاد کردہ غلام حضرت ثوبان رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم جب سفر کا ارادہ کرتے تو اپنے اہل و عیال میں سے سب کے بعد جس سے گفتگو فرما کر سفر پر روانہ ہوتے وہ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا ہوتیں اور سفر سے واپسی پر سب سے پہلے جس کے پاس تشریف لاتے وہ بھی حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا ہوتیں۔
ایک اور مشہور حدیث (جو حدیث کساء کے نام سے معروف ہے) کے مطابق حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے ایک یمنی چادر کے نیچے حضرت فاطمہ، حضرت علی رضی اللہ عنہ و حسن رضی اللہ عنہ و حسین رضی اللہ عنہ کو اکٹھا کیا اور فرمایا کہ بے شک اللہ چاہتا ہے کہ اے میرے اہل بیت تجھ سے رجس کو دور کرے اور ایسے پاک کرے جیسا پاک کرنے کا حق ہے
رب تبارک و تعالٰی ہم سب کو سیرت ِ فاطمہ الزہرہ رضی اللہ عنہا کا مظھر بنادے، آمین ثم آمین

Post a Comment

0 Comments